غزل : ڈاکٹر فریاد آزر، دہلی، انڈیا
کشش  ایسی تھی  شہروں کی کہ صحر  ا چھوڑ  آئے تھے
مگر  ہم  لوگ   جینے  کا  قرینہ  چھوڑ   آئے تھے

گئے  تو   پھر  کوئی   پہچاننے   والا  نہ  مل  پایا 
کبھی  ہم  گائوں  کو  روتا  بلکھتا چھوڑ  آئے تھے

ہجومِ  دشمنانِ  جاں  کو  بھی  ہم نے  معافی  دی
کہ  جن  کے  ظلم سے تنگ آ کے مکہ چھوڑ آئے تھے

اب اس کی جان بچ   بھی جائے تو کیا زندگی اس کی
جسے  شہوت  درندے  نیم مردہ  چھوڑ  آئے تھے

تو  کیا  اب  ـ’ لوٹ  جائو  یا مرو ‘  کا  وقت  آ پہنچا؟ 
مگر  جو  لوگ طوفاں  میں  سفینہ  چھوڑآئے تھے؟

سنا ہے  ان  کے  بچے  بھی جدا رہنے لگے ان سے 
بزرگوں  کو  جو گائوں  میں  اکیلا چھوڑ  آئے تھے

ہراک  ساماں اٹھا لائے مکاں  تبدیل  ہوتے ہی 
مگر  ہم  طاق  ِنسیاں  پر  صحیفہ  چھوڑ  آئے تھے

انھیں  محلوں  میں  اب  کتنے  محلے  بس گئے آزرؔ 
جہاں  ہم  سبز صدیوں  کا  اثاثہ  چھوڑ آئے تھے




یہ غزل آپ کو کیسی لگی ؟ اسے کتنے ستارے دینا چاہیں گے؟