غزل : کاشف بٹ، راولپنڈی، پاکستان
یہ غم کپاس پہ بارِ گراں نہیں بنتا
مرا لباس مرا رازداں نہیں بنتا

حضور آپ تو مختارِ کل ہیں ڈر کیسا
کرایے دار تو مالک مکاں نہیں بنتا

ترا جواب مرا امتحاں تو بنتا ہے
ترا سوال مرا امتحاں نہیں بنتا

شراب میرے سرھانے دھری ہے لیکن میں
مرے ندیم ترا میزباں نہیں بنتا

اُبل رہا ہے زمیں سے لہو مگر کاشفؔ
رفیقِ غم زدگاں آسماں نہیں بنتا


یہ غزل آپ کو کیسی لگی ؟ اسے کتنے ستارے دینا چاہیں گے؟