غزل : پروفیسر محمد سفیان صفی، ہزارہ یونیورسٹی، پاکستان
صبا کا ہاتھ ترے ہاتھ میں رہا کچھ دیر
چمن ہوا تری خوشبو سے آشنا کچھ دیر

گلاب بن کے مہکنا ہے عمر بھر اُس کو
جس آئینے میں کھِلی ہے تری ادا کچھ دیر

حرم بنا تھا کوئی بت کدہ گھڑی بھر کو
صنم کدے میں ہوئی تھی خدا خدا کچھ دیر

خرامِ ناز کی نوبت مگر نہیں آئی
زمینِ دل پہ قیامت ہوئی بپا کچھ دیر

خم و سبو میں اترتے رہے کئی مہتاب
رُکی تھی بادہ کدے میں کوئی گھٹا کچھ دیر

جہاں بھی کعبۂ مقصود کی جھلک دیکھی
وہیں نمازِ محبت ہوئی ادا کچھ دیر

مشامِ جاں سے رگِ جاں تلک اُجالا رہا
مرے لہو میں بھٹکتا رہا دِیا کچھ دیر

کسی کی زُلف نے چومی مری جبینِ نیاز
رہی بدن پہ مرے عنبریں قبا کچھ دیر

شہید ہوتے ہوئے گُل تھے تیرے قدموں میں
ہوئی تھی محوِ سخاوت تری جفا کچھ دیر

یہ غزل آپ کو کیسی لگی ؟ اسے کتنے ستارے دینا چاہیں گے؟