غزل : پروفیسر کلیم احسان بٹ، گجرات، پاکستان

صحرا دیا گیا کہ بیاباں دیا گیا
کارِ جنوں کو شوق کا ساماں دیا گیا

کچھ پالتو پرندے چمن میں اتار کر
ہم کو فریبِ فصل بہاراں دیا گیا

ہم نے اسے نشاطِ سخن میںبدل دیا
سو بار رنجِ فرقتِ خوباں دیا گیا

وہ غم ہمیں خوشی سے زیادہ عزیز ہے
جو غم ہمیں بنامِ عزیزاں دیا گیا

ہم کو عطا ہوئی ہے قناعت کلیم بٹ
داماں بقدرِ حسرت و ارماں دیاگیا


یہ غزل آپ کو کیسی لگی ؟ اسے کتنے ستارے دینا چاہیں گے؟