نظم: سگریٹ: وسیم فرحت کارنجوی
اے مرے دم ساز میرے ہم سفر میرے رفیق
اے کہ تیری ذات سے منسوب ہیں عقدے دقیق
تجھ میں مضمر ہیں مری بے باکییاں تنہائیاں
جیسے کوئی ماہ رو کی انگنت انگڑائیاں

اے مرے مونس مرے غم خوار  اے میرے  حبیب
پا بہ جولاں کے قلندر،شب گزیدوں کے نقیب
تجھ سے وابستہ مری انجان راتوں کا گداز
تجھ میں پوشیدہ جوانی کے کئی نا گفتہ راز

کون جانے تیری میری دل نوازی خوشخصال
آبشاروں کا ترنّم، ماہ پاروں کا جمال
ہے پرے ادراک سے تیرے کرم کی داستاں
شاعر  ِآتش نوا پر رحمت ِ کون و مکاں

خالق ِ جوش ِ جنوں ہے اور تحریک ِ عمل
زندگی ہے اک سفر اور تو سفر کا ماحصل
میری رگ رگ میں نہاں ہے تیرے انور کا ظہور
ریزہء الماس سے بڑھ کر ہے تیرا ذرہ نور

ساز ِ گیتی پر انوکھا زمزمہ پرداز تو
جاں بہ لب اور جنبش ِ انگشت کی آواز تو
میری ہر تخلیق تیرے انس کی اب تک رہین
سرمہء دنبالہ دار و سلسبیل و انگبین

تیری خوشبو صورت ِ مشک و گلاب وزعفران
اور دھواں تیرا ہو جیسے صبح ِ نو کا اک جہان
کتنی ہیبت ناک راتیں تیرے دم سے کیں تمام
ذہن کی ہر سطح پر جب تھے مصائب اژدہام

تیری قربت نے ہمیں بخشا ہے وہ روشن خیال
ہو منوّر جس سے شب ہائے سیاہ کے خدّو خال
ہے حریر و اطلس و کمخواب سے بہتر لباس
اور اندرونی شباہت ہائے رے بو ہائے باس

تیری زلف ِ شب نما کے تھے گرفتار و شکار
ساحرؔو جوشؔ و مجازؔ و فیضؔ احمد جاں نثارؔ
اور پھر اس عہدِ نو میںایک دیوانہ ترا
ناز ہے جس پر ادب کو ،ہاں وہی راناؔ ترا

تیرے ہرہر لمس کا احساس تابندہ رہے
نام تیرا ہر زباں پر ہر قدم زندہ رہے

یہ نظم آپ کو کیسی لگی ؟ اسے کتنے ستارے دینا چاہیں گے؟